وقار شاہ دراصل ہے کون؟ متاثرین کو انصاف ملنے کا وقت

لاہور(نیوز ڈیسک )سانحہ موٹروے، دوسرے ملزم کی بھی نشاندہی ہوگئی، گیا ہے۔ دوسرے ملزم کا نام وقار الحسن شاہ ہے، لاہور میں میڈیا سے بریفنگ کے دوران آئی جی پنجاب انعام غنی نے بتایا کہ ابھی تک کوئی گرفتاری نہیں ہو سکی تاہم دونوں ملزمان کی نشاندہی کر لی گئی ہے۔ دونوں مل کر کافی عرصے سے

پنجاب کے مختلف علاقوں میں اس طرح کے واقعات میں ملوث ہیں۔ پاکستانیوں سے اپیل ہے کہ جہاں بھی ان لوگوں کو دیکھیں تو پھر 15 پر کال کر کے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو اطلاع دیں تاکہ ملزمان کو کیفر کردار تک پہنچایا جاسکے، اس موقع پر وزیر اعلیٰ پنجاب نے اعلان کیا کہ جو بھی ان لوگوں کی نشاندہی میں مدد فراہم کریں گے انکے نام صیغہ راز میں رکھے جائیں گے اور انہیں 25 لاکھ روپیہ انعام بھی دیا جائے گا۔ یہاں پر یہ امر بھی قابلِ ذکر ہے کہ قانون نافذذ کرنے والے اداروں کے ہتھے پہلے ہی ایک ملزم قانون کے ہتھے چڑھ چکا ہے، جس کا ڈی این اے بھی متاثرہ خاتون سے میچ کر چکا ہے، عابد ولد اکبر علی کا تعلق بہاولپور کے علاقے فورٹ عباس سے ہے، عابد نے سال 2013 میں دوران ڈکیتی ایک خاتون اور اسکی بیٹی کی عزت لوٹ لی تھی، ملزم کے ساتھ اس وقت اسکے 4 ساتھی بھی موجود تھے، اس واقعہ کے بعد چھ مہینوں تک اس کیس کی سماعت کی گئی تاہم بعد میں ملزمان نے مدعیوں پر دباؤ ڈال کر صلح کر لی یوں پھر یہ معاملہ ختم ہوگیا، بدنامی کی وجہ سسے متاثرہ خاندان نے علاقہ چھوڑ دیا، جس کے بعد اہلیان علاقہ نے دباو ڈالا جس کے بعد عباد اور اسکے خاندان نے فورٹ عباس کا علاقہ چھوڑ دیا تھا، عابد کا تعلق اتنے درندہ صفت خاندان سے ہے کہ وہ لوگ کچھ عرصہ قبلل اپنی بہن کی بھی جان لے چکے ہیں،عابد کی ایک بیٹی بھی ہے اور اس نے پسند کی شادی کر رکھی ہے ۔ٰ

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.